12

لنکا پریمیئرلیگ ؛ میدان سجنے سے پہلے ہی رنگ پھیکا پڑگیا

ٹیموں کی فروخت کا عمل رواں ہفتے مکمل،پلیئرزڈرافٹ یکم اکتوبرکومتوقع  فوٹو : فائل

ٹیموں کی فروخت کا عمل رواں ہفتے مکمل،پلیئرزڈرافٹ یکم اکتوبرکومتوقع فوٹو : فائل

کولمبو:  میدان سجنے سے پہلے  ہی لنکا پریمیئر لیگ کا رنگ پھیکا پڑنے لگا، 14  روزہ قرنطینہ کی شرط ٹاپ پلیئرز کی ایونٹ میں عدم دلچسپی کا سبب بنے لگی، ایونٹ میں بدستور حصہ لینے کے خواہشمند کرکٹرز عالمی سطح پر زیادہ نمایاں نہیں، ٹیموں کی فروخت کا عمل رواں ہفتے مکمل، پلیئرز ڈرافٹ یکم اکتوبر کو متوقع ہے۔

تفصیلات کے مطابق لنکا پریمیئر لیگ کا پہلا ایڈیشن نومبر میں شیڈول ہے تاہم مزید تاخیر کی اطلاعات پہلے ہی سامنے آ چکے ہیں،ٹاپ کرکٹرز کی عدم شرکت کی وجہ سے اس کا رنگ بھی پھیکا پڑنے کا خدشہ ہے، سری لنکا کی وزارت کھیل کی جانب سے دوسرے ممالک سے آنے والوں کیلیے 14 روز کی لازمی قرنطینہ پابندی ہے اور وہ اس میں کسی بھی قسم کی رعایت دینے کو تیار دکھائی نہیں دیتی۔ سری لنکا کرکٹ کے نائب صدر اور ایل پی ایل ٹورنامنٹ ڈائریکٹر راون وکرمارتنے نیکہاکہ اگر وزارت کھیل اس پابندی پر بضد رہی تو پھر ٹاپ کھلاڑی  ایونٹ میں شریک نہیں ہوسکیں گے۔ ایس ایل سی نے ایونٹ کیلیے 150 غیرملکی کھلاڑیوں کو شارٹ لسٹ کیا ہے جس میں سے ڈرافٹ میں ہر فرنچائز زیادہ سے زیادہ 6 پلیئرز کی خدمات حاصل کر سکے گی۔

وکرمارتنے نے کہاکہ انڈین پریمیئر لیگ کا اختتام 10 نومبر کو ہوگا جبکہ ایل پی ایل اس کے 4 روز بعد شروع ہونی ہے، 14 روزہ قرنطینہ کا مطلب یہ ہے کہ آئی پی ایل سے آنے والے کھلاڑی ہمارے ٹورنامنٹ کے صرف آخری حصہ کیلیے ہی دستیاب ہوسکیں گے، ہمارے پاس ایسے 59 کھلاڑیوں کی فہرست ہے جو اس کے باوجود بھی ٹورنامنٹ کھیلنے کو تیار ہیں لیکن وہ ٹاپ پلیئرز نہیں ہیں۔ وکرمارتنے نے مزید کہا کہ فرنچائزز کی فروخت کا عمل اسی ہفتے مکمل ہوجائے گا، 12 پارٹیاں ٹیمیں خریدنے میں دلچسپی ظاہر کرچکی ہیں جبکہ کھلاڑیوں کا ڈرافٹ یکم اکتوبر کو شیڈول ہے۔واضح رہے کہ سری لنکن بورڈ ذرائع واضح کر چکے ہیں کہ ٹورنامنٹ کا انعقاد آئندہ برس جنوری سے قبل ممکن نہیں لگتا، البتہ ابھی اس کا باقاعدہ اعلان نہیں ہوا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں